Editor's Choice

Featured Post

"Let us build Pakistan" has moved.
30 November 2009

All archives and posts have been transferred to the new location, which is: http://criticalppp.com

We encourage you to visit our new site. Please don't leave your comments here because this site is obsolete. You may also like to update your RSS feeds or Google Friend Connect (Follow the Blog) to the new location. Thank you.


Wednesday, 4 March 2009

Swat still in Taliban's control - BBC report 4 March 2009

For the women of Swat

By Zubeida Mustafa
Wednesday, 04 Mar, 2009

THE theme of International Women’s Day on March 8 is “women and men united to end violence against women and girls”.

It is quite ironic that at a time when the UN is focusing on eliminating violence against women, the Pakistan government and the army have sought to buy peace in Swat by surrendering in this once idyllic valley many of the rights and freedoms women have won over the years in the country.

Some may view last month’s peace agreement differently. Protagonists have argued that the accord which provides for the imposition of the Nizam-i-Adl in Malakand is quite benign. According to them, it will not change the laws. It will only revert to the system of justice that was in force in the good old days before the state was merged with the NWFP.

But there are some aspects of the situation in Swat that should be addressed seriously. First, the circumstances under which the deal has been negotiated are not very propitious. The Taliban have blackmailed the government and imposed their will simply by resorting to violence and brutality. Their success in having their way will encourage militants to repeat the strategy of violence in other parts of the country — and have their way yet again.

Second, the agreement has been at the expense of women. Just how much the women and girls of Swat have suffered since the Tehrik-i-Taliban Pakistan gained ascendancy in the region is well-known. The accord that was concluded contains no word on what the status of women is to be under the new system of Sharia. It contains no word of apology to the women whose lives were cut short, whose livelihoods were destroyed and whose education was interrupted so brutally. And what about the women whose male kin were tortured and murdered in the name of the Taliban’s brand of Sharia?

The army also played havoc with the lives of men and women. It made its own contribution to the disruption of education by putting up its camps in schools — 15 institutions are still occupied — preventing children from pursuing their studies.

Most disconcerting is that we now know little about what is happening in Swat. On Saturday, the NWFP information minister expressed satisfaction at the situation in the valley. But there is no way of verifying his claim. A veil of silence has descended on events in Swat leaving us in the dark about developments in the post-agreement period. This is disturbing especially when immediately after the ceasefire the predominant mood has been one fear. People say, “Wait and see.”

The main question that has agitated the minds of those who are concerned about the women and girls of Swat is how the agreement is being implemented with regard to them. With nearly 185 schools totally/partially destroyed the children, especially girls, have been effectively excluded from the education system. We have only been told in terse statements that schools have reopened, and colourful pictures of innocent-looking girls with headscarves have been splashed across the media.

First-hand accounts, however, have a different story to tell. The school authorities in Mingora confirmed to me that private schools opened soon after the agreement was concluded but that attendance has been thin, especially in the secondary classes. Many parents are afraid to send their girls to school while others have left their homes to move to other parts of the country and have still not returned. Government schools opened on Monday as scheduled but only a handful of girls showed up.

The worst affected are the rural areas where the Taliban’s presence continues to be pretty visible — in violation of the peace agreement — and the fear they have generated still grips the people. Since the government’s writ fails to run there is a general sense of insecurity and lack of confidence in the government’s capacity to provide protection to women.

Have the Taliban and the authorities done anything to clear the atmosphere of fear and terror they had spread to force women to stay at home? In the absence of assurances and the writ of the state many girls and women do not venture out of their homes for fear of falling victim to the violence of the Taliban. With no move to rebuild the damaged schools, girls have been, ingeniously, kept away from education.

The illegal FM radio broadcasts that were used to spread terror by Mullah Fazlullah, earning him the epithet of Maulana Radio, have not been jammed. Neither have the air waves been used by the Taliban to revoke their earlier edicts banning female education.

But why is Swat shrouded in secrecy? Events have taken such a turn — whether by accident or design — that Swat has receded to the backburner. The killing of Musa Khankhel, a local journalist, has had a terribly dampening impact on the media. The horrific event came just two days after the agreement and on the day Sufi Mohammad met Mullah Fazlullah to discuss its implementation. As it came to light that Musa had been receiving threats from both sides — the Taliban and the army — before

he was murdered, journalists in the valley have lost heart and are no longer as active as they were before.

Equally disturbing is the turbulence that has overtaken Punjab politics in the wake of the Supreme Court judgment in the Sharif brothers’ case. Media attention is now focused on the confrontation between the PPP and the PML-N, and Swat is a story of the past, even though it should not be.

All this can only leave one guessing about the fate of women in Swat, in fact, about the goings-on in the valley. This is not a case of cosmetic changes being introduced in the judicial system. Swat is actually regressing. In any society where this phenomenon occurs the yardstick to measure the slide that is taking place is to assess the status of women under the new order. If their freedoms have been snatched from them and then not restored in the same measure as before, isn’t it a case of one step forward two steps back? (Dawn)



سوات: مولانا فضل اللہ کا مرکز خالی

مولانا فضل اللہ
حکام کا کہناہے کہ فوج نے اپنے زیر قبضہ طالبان سربراہ مولانا فضل اللہ کے امام ڈھیرئی مرکز کو خالی کردیا ہے

صوبہ سرحد کے ضلع سوات میں حکام کا کہناہے کہ فوج نے اپنے زیر قبضہ طالبان سربراہ مولانا فضل اللہ کے امام ڈھیرئی مرکز کو خالی کردیا ہے جبکہ دس کے قریب طالبان کو رہا کرنے کا اعلان کیا گیا ہے۔

دوسری طرف حکومت نے سوات میں ان خواتین اور افراد کے علاقہ بدر کرنے کا اعلان کیا ہے جو بقول اسکے مبینہ طور پر’ فحاشی پھیلانے‘ میں ملوث ہیں۔

یہ اعلانات ملاکنڈ ڈویژن کے کمشنر سید محمد جاوید نے منگل کو طالبان کی جانب سے سکیورٹی فورسز پر حملے کے دوران دو اہلکاروں کی ہلاکت کے بعد پیدا ہونے والی کشیدہ صورتحال پر قابو پانے کےلیے بدھ کو کالعدم نفاذ شریعت محمدی کے ساتھ ہونے والی گفت وشنید کے بعد بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کیے ہیں۔

سید محمد جاوید کا کہنا تھا کہ بات چیت کے بعد انہوں نے تحریری طور پر بعض نکات پر اتفاق کیا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ فوج نے مولانا فضل اللہ کے امام ڈھیرئی مرکز کو خالی کردیا ہے اور کالعدم نفاذ شریعت محمدی کے سربراہ مولانا صوفی محمد کسی بھی وقت وہاں قیام کے لیے منتقل ہوسکتے ہیں۔

ان کے بقول حکومت نے فریقین کے درمیان اعتماد کی بحالی کے لیے ابتدائی مرحلے میں ان دس طالبان کو رہا کرنے کا فیصلہ کیا ہے جن کے خلاف بقول ان کےچھوٹے چھوٹے مقدمات درج تھے۔اس کے علاوہ ان کے مطابق سکیورٹی فورسز نے تختہ بند چیک پوسٹ اور بعض دیگر ناکوں کو ختم کردیا ہے۔

کمشنر کے مطابق حکومتی اقدامات کے جواب میں طالبان سکیورٹی فورسز کے راشن لیجانے والے قافلوں پر حملہ نہیں کریں گے اور مینگورہ کے قمبر کے علاقے میں اپنی چیک پوسٹیں بھی ختم کریں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایک تین رکنی کمیٹی بھی قائم کردی گئی ہے جس میں وہ خود، فوج اور ٹی این ایس ایم کا ایک ایک نمائندہ شامل ہے۔ ان کے بقول کمیٹی علاقے کا دورہ کر کے اس بات کا جائزہ لے گی کہ فوج اگر کہیں کسی کے گھر، سکول اور ہسپتال میں تعینات ہے اس سے وہاں سے نکالنے کے لیے صوبائی حکومت کو تحریری طور پر درخواست کرے گی۔

کمشنر ملاکنڈ ڈویژن نے سرکاری طور پر بعض اہم اقدامات کا اعلان بھی کیا۔انہوں نے بی بی سی کو بتایا کہ ان عورتوں اور افراد کو مبینہ طور پر علاقہ بدر کیا جائے گا جو بقول ان کے کسی طور بھی’ فحاشی اور عریانی‘ پھیلانے میں ملوث پائے گئے۔

انہوں نے مزید کہا کہ شہر میں سی ڈی فلموں اور میوزک سینٹروں میں ’فحش فلمیں اور تصاویر‘ آویزاں کرنے کی اجازت نہیں ہوگی تاہم انہوں نے یہ نہیں بتایا کہ کیا پہلے سے بند ان میوزک سنٹروں کو کھولنے کی اجازت ہوگی جو فحش مواد بیچنے میں ملوث نہ ہؤں۔ سوات میں میوزک اور سی ڈی کی پانچ سو سے زائد دکانیں پہلے ہی بند ہوچکی ہیں اور پورے شہر میں کوئی بھی دکان کھلی ہوئی نظر نہیں آئے گی


سوات ابھی تک طالبان کے قبضے میں

کئی دن پہلے ڈسٹرکٹ آفسر ایف سی کو بھی اپنے تین ساتھیوں کے ہمراہ طالبان نے مبینہ طور پر اغواء کیا جنہیں چوبیس گھنٹے بعد رہا کردیا گیا

سوات میں حکومت اور کالعدم نفاذ شریعت محمدی کی توسط سے طالبان کے ساتھ ہونے والا امن معاہدہ سولہ روز گزرنے کے باوجود بھی کچے دھاگے کے ساتھ بندھا ہوا ہے اور اب بھی اسّی فیصد سے زائد علاقے پر طالبان کی عملداری بدستور برقرار ہے۔

سولہ فروی کو ہونے والے امن معاہدے کے بعد دونوں جانب سے مستقل جنگ بندی کا اعلان تو ہوا لیکن اس دوران کئی ایسے واقعات رونماء ہوئے ہیں جس سے بظاہر یہ معلوم ہوتا ہے کہ جنگ بندی عملی نہیں بلکہ صرف زبانی ہی ہوئی ہے۔

طالبان کے سربراہ مولانا فضل اللہ نے جنگ بندی کے اعلان کے وقت اپنے مسلح ساتھیوں کو ہدایت کی تھی کہ وہ اسلحے کی نمائش، سکیورٹی فورسز پر حملے اور اہلکاروں کو اغواء نہ کریں۔

لیکن عملاً ہوا کیا؟ اگلے ہی دن مینگورہ کی نواح میں واقع طالبان کا گڑھ سمجھے جانے والے قمبر کے علاقے سے سوات کے ضلع رابطہ آفسر خوشحال خان کو طالبان نے اغواء کیا اور دو ساتھیوں کی رہائی کے بدلے میں انہیں واپس چھوڑ دیا۔

دو دن پہلے ڈسٹرکٹ آفسر ایف سی کو بھی اپنے تین ساتھیوں کے ہمراہ طالبان نے مبینہ طور پر اغوا کیا جنہیں چوبیس گھنٹے بعد رہا کردیا گیا۔ لیکن اس سے بھی بڑا واقعہ منگل کو پیش آیا جس نے فریقین کی جانب سے اعلان کردہ جنگ بندی کو غیر اعلانیہ طور پر توڑ دیا۔

سکیورٹی فورسز کا قافلہ تحصیل مٹہ رونیال کے علاقے میں بقول فوجی حکام پانی لانے جارہا تھا کہ مسلح طالبان نے اس پر حملہ کردیا جس کے بعد جھڑپ شروع ہوئی۔ اس جھڑپ میں دو سکیورٹی اہلکار ہلاک اور ایک زخمی ہوگیا ہے۔ اور منگل کو ہی مینگورہ کے قمر سے اینٹی کرپشن آفسر یامین خان کو اغواء کیا گیا جنہیں بھی بعد میں چھوڑ دیا گیا ہے۔

طالبان کا موقف ہے کہ سکیورٹی فورسز ان کے اجازت کے بغیر ان کے زیر کنٹرول علاقوں میں نقل و حرکت کرتے ہیں یعنی دوسرے لفظوں میں طالبان کی اپنی ایک ریاست ہے اور وہ اپنی ریاست کے اندر کسی دوسری ریاست کے قیام کی اجازت نہیں دے رہے ہیں۔ وہ یہ دعوی بھی کرتے ہیں کہ سکیورٹی فورسز نے وعدے کی خلاف ورزی کرتے ہوئے چیک پوسٹیں ختم نہیں کی ہیں۔

طالبان کا موقف ہے کہ سکیورٹی فورسز ان کے اجازت کے بغیر ان کے زیر کنٹرول علاقوں میں نقل و حرکت کرتے ہیں

مقامی لوگ طالبان کے اس دعوے کی تصدیق کرتے ہیں۔اب بھی فضاء گٹ، خوازہ خیلہ ، کانجو ایوب برج ، کوزہ بانڈہ ، کانجو، مریم پل اور ننگولئی میں سکیورٹی فورسز کی چیک پوسٹیں قائم ہیں جن میں سے بعض کے ختم ہونے کا حکومت نے اعلان بھی کیا تھا۔

فوجی کاروائی کے دوران طالبان کو سوات کے جن علاقوں پر کنٹرول حاصل تھا وہاں اب بھی ان کی عملداری ہے۔ صدر مقام مینگورہ کے وسطی علاقے پر سکیورٹی فورسز کا قبضہ ہے جبکہ باقی مینگورہ کے مضافاتی علاقوں طاہر آباد، قمبر، تختہ بند، ملوک آباد میں طالبان کا گشت معمول کے مطابق جاری و ساری ہے۔ تحصیل مٹہ، کبل،خوازہ خیلہ اور چہارباغ وہ وسیع علاقے ہیں جہاں پر طالبان کا ویسا ہی کنٹرول ہے جیسے پہلے تھا۔

ان علاقوں میں اب بھی مقامی لوگوں کے مطابق طالبان لوگوں کو کوڑوں کی سزائیں دے رہے ہیں۔خود طالبان ترجمان مسلم خان نے چند دن قبل بی بی سی کو بتایا تھا کہ انہوں نے اپنے پانچ ساتھیوں کو اس بات پر سزا دی ہے کہ وہ لوگوں کے بال کاٹ رہے تھے۔ لیکن لوگوں کا کہنا ہے کہ یہ سلسلہ اب بھی جاری ہے۔

تحصیل کبل کے ٹال میں اے این پی کے مقامی رہنما ملک احمد، مانجہ کلاگئی میں خورشید خان اور الیاس خان کے بھائی کے گھروں کو نقاب پوشوں نے مکمل طور پر لوٹ لیا ہے البتہ اس بارے میں یہ تصدیق نہیں ہوسکی کہ کیا یہ کارروائیاں طالبان نے کی ہیں یا اس میں کوئی اور گروہ ملوث ہے۔

صوبائی حکومت طالبان سےنمٹنے کے لیے صرف ایک ہی شخص مولانا صوفی محمد پر تکیہ کیے بیٹھی ہے

فضاء گٹ میں واقع زمرد کے کان میں غیر قانونی کانکنی طالبان کے زیرسایہ آج بھی جاری ہے جبکہ مدین، مالم جبہ ، منگلور اور آس پاس کے علاقوں میں مبینہ ٹمبر مافیا اب بھی طالبان کی اجازت سے جنگلات کی کٹائی میں مبینہ طور پر مصروف ہیں۔

صوبائی حکومت طالبان سےنمٹنے کے لیے صرف ایک ہی شخص مولانا صوفی محمد پر تکیہ کیے بیٹھی ہے لیکن اب ان کے لب و لہجہ میں بھی غصہ اتر آیا ہے۔ انہوں نے حکومت کو دھمکی دی ہےاگر وہ معاہدے کی پاسداری نہیں کرتی اور سکیورٹی فورسز کی جانب سے’ طالبان کے علاقوں‘ میں نقل و حمل جاری رہتی ہے تو وہ امن معاہدے سے دستبرادر ہوجائیں گے۔

بظاہر ایسا لگ رہا ہے کہ امن معاہدے کے بعد حکومت نے دفاعی اور طالبان نے جارحانہ انداز اپنا یا ہوا ہے۔ طالبان کی کوشش ہے کہ وہ حکومت پر اتنا دباؤ ڈال دیں کہ وہ اپنے گرفتار شدہ ساتھیوں کو رہا کروائیں اور ساتھ میں حکومت کو انہیں عام معافی دینے پر بھی مجبو کر دے تاکہ اگر کل کلاں شرعی عدالتیں لگتی ہیں تو کوئی متاثرہ شخص انکی قیادت کو عدالت کے کٹہرے میں کھڑا نہیں کرسکے گا

No comments:

Post a Comment

1. You are very welcome to comment, more so if you do not agree with the opinion expressed through this post.

2. If you wish to hide your identity, post with a pseudonym but don't select the 'anonymous' option.

3. Copying the text of your comment may save you the trouble of re-writing if there is an error in posting.