Editor's Choice

--------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------
Featured Post
--------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------

"Let us build Pakistan" has moved.
30 November 2009

All archives and posts have been transferred to the new location, which is: http://criticalppp.com

We encourage you to visit our new site. Please don't leave your comments here because this site is obsolete. You may also like to update your RSS feeds or Google Friend Connect (Follow the Blog) to the new location. Thank you.


--------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------

Wednesday, 4 March 2009

Denial mode, yet again: The Attack on Sri Lankan Cricket Team and Our Response

http://www.huffingtonpost.com/huff-wires/20090303/as-pakistan-cricketers-attacked/images/1fd2a7ab-777c-4373-899a-8dba94db0484.jpg

Denial mode, yet again —Ejaz Haider

Predictably, some analysts have immediately put the blame on India. While at this stage no possibility can be ruled out, the fact remains that the responsibility for providing security to the Sri Lankan team was ours and we failed on that count

The only surprising factor in the Tuesday terror attack in Lahore is that the authorities did not anticipate it.

The security with the convoy was not geared towards responding to an ambush. In fact, the convoy was also vulnerable to other types of terrorist attacks — a possible IED (improvised explosive device) attack or even two suicide bombers strategically placed to ram explosives-laden vehicles into the convoy.

What does this tell us? The Lahore attack was a huge security failure at all levels — from poor intelligence to poor local protection for the convoy all along the route from the hotel to the stadium.

On the other hand, the attackers, according to what has been reported so far, were fully prepared. They struck on the morning of the third day of the Test, which means they had reconnoitred the route, surveilled the convoy, selected the point of attack, decided on the numbers they required and positioned themselves in a way that would allow them to fire at the convoy from multiple directions.

The point of attack, the Liberty roundabout, offered at least three advantages: the convoy would have to slowdown; the area is open and allows multiple positioning and open arcs of fire; and, the attackers could extricate in all directions after mounting the attack.

If the report that one of them first fired an RPG but missed is correct, then we should be thankful. The RPG hit would have left a different story behind it. But leaving aside what is known and is being constantly reported on TV channels, the question is simpler: Why this security lapse?

Pakistan has been trying its best, and for legitimate reasons, to convince cricket teams to come and play in Pakistan even as the terrorist threat in the country has steadily increased. Some teams have refused to play in Pakistan; Sri Lanka decided it would. Given how much we need teams to come and play here, given also the clear threat of terror attacks, the Sri Lankan team should have been provided the highest level of security at every point.

The team was most vulnerable while travelling between the hotel and the stadium. This means securing the route against all possibilities: suicide bombers, IEDs, snipers, ambush etc. Not only should all possible points of attack have been identified, those points should also have been secured. There should have been aerial patrolling, which was done after the attack had been mounted.

These are standard operating procedures in situations that call for high security. That situation, unless we want to deny it, now obtains in Pakistan. There is also the element of what kind of target the terrorist would want to take out. International concern and condemnation as also the objective of isolating Pakistan and showing the state to be weak-kneed are obvious objectives.

The Sri Lankan team thus made an ideal target and the authorities should have realised that. But they didn’t and nothing was done to secure the route on the ground or from the air ahead of the team’s movement.

We can now be sure that the International Cricket Council, which has called for a review of the status of the 2011 World Cup, would be averse to allowing Pakistan to host it. That’s another huge blow to us.

This is, of course, one aspect of this episode. But there is another which is even more troubling, namely whodunit.

Predictably, some analysts have immediately put the blame on India. While at this stage no possibility can be ruled out, the fact remains that the responsibility for providing security to the Sri Lankan team was ours and we failed on that count. Even very high security may not be enough at times to prevent a terrorist attack. But precisely for that reason security measures should be as sophisticated as possible and try to stay ahead of improvisations by the terrorist outfits.

President Zardari’s praise for the courage of the policemen who died in the attack is an appropriate gesture but does not take away the fact — in fact highlights it — that proper security measures would have helped avoid the attack and save lives as well as Pakistan’s already battered image.

Second, if India is indeed behind this, its intelligence agencies should be commended for getting recruits from within Pakistan to mount an attack on the Sri Lankan team. Given how late the Sri Lankan team decided to play the Test in Lahore and the logistics and other requirements for mounting such an operation, the Indians didn’t have much time to put this together — in which case, if these analysts are to be believed, India seems to have done an impressive job.

The worst thing that can happen to a state is to go into denial. How long will we deny that we have groups that have run amok and whose obvious agenda involves destroying Pakistan as a nation-state? These are ideologically motivated millenarians, ahistorical in their approach and literalist in their outlook. They are trained, and societal attitudes transformed over three decades allow them to find recruits with alarming ease.

To point to India (‘khufia haath’ — hidden hand) without bothering to look at other evidence for which we now have a long trajectory, is not simply ignorance; it is deliberate perfidy.

While improving intelligence gathering for pre-emption and security procedures for tackling a threat are issues that need to be immediately addressed in terms of increasing capacity, the broader issue is linked to our societal attitudes. This is an area where the role of the media becomes crucial.

So far there has been no debate on this within the media, at least not in any structured manner. There are channels, anchors and a “select” group of analysts always at hand that, in conjunction, reinforce existing biases through obvious distortions, weaving a tapestry of conspiracies. What should be done about them?

Here’s the question: Should they be allowed to spread this poison on the basis of “freedom of speech”? Would this not be akin to allowing someone with a gun to start shooting on the basis of “freedom of action”?

Carl Schmitt, the controversial German philosopher and jurist, writing during the twilight of the Weimer Republic, was arguing that parties and entities opposed to the principles enshrined in the Constitution should not be allowed to operate. The liberals were opposed to his viewpoint. But that misplaced liberalism resulted in a transformation that led Germany into a period from which the Germans are still trying to recover.

Would we like to go that way or should we begin to ask ourselves some hard and tough questions regarding what it is that we want as a nation? It doesn’t seem to me that we are even clear on the issue of whether we are a nation-state in the modern sense. That requires self-reflection, not pointing fingers at others and distorting facts.

The attack has done its damage. But if something positive can come out of it, there may be less sense of waste, after all.

Ejaz Haider is Op-Ed Editor of Daily Times and Consulting Editor of The Friday Times. He can be reached at sapper@dailytimes.com.pk

.....

انتہاپسندی اور جلدبازی کے تجزیے


پاکستانی اخبارات(فائل فوٹو)
پاکستان کے ذرائع ابلاغ اور کچھ سیاسی حلقوں میں انتہا پسندی کے عذرخواہوں کی کوئی کمی نہیں
لاہور لبرٹی چوک میں سری لنکا کرکٹ ٹیم پر ہونے والے حملے کے چند ہی منٹ بعد ایک ٹی وی چینل پر ایک معروف ریٹائرڈ لیفٹیننٹ جنرل کا براہ راست انٹرویو نشر کیا گیا جنھوں نے حملے کے قلابے ممبئی کے دہشت گرد حملوں سے ملاتے ہوئے خیال ظاہر کیا کہ سری لنکا کی کرکٹ ٹیم پر حملہ بھارتی خفیہ ایجنسی را کی طرف سے ممبئی حملوں کا انتقام ہے۔

اس ابتدائی اشارے کے بعد پاکستان کے نجی ٹیلی ویژن چینلوں کا رُخ ممبئی حملوں اور پھر بھارت کے ممکنہ انتقامی کردار کی طرف مُڑ گیا۔ بہت کم تجزیہ کاروں نے اِس نکتے پر توجہ دی کہ اگر ممبئی حملوں اور لاہور کے لبرٹی چوک میں دہشت گردی کے طریقہ واردات میں مماثلت پائی جاتی ہے تو اس سے یہ نتیجہ نکالنا کہیں زیادہ قرینِ قیاس ہے کہ یہ واردات بھی غالباً اُسی تنظیم کا کام ہے جس نے ممبئی حملوں کی منصوبہ بندی کی تھی۔

بغیر کسی ٹھوس ثبوت کے ہمسایہ ملک پر سازش کا الزام لگانے کا مقصد لاہور میں حملے کے مرتکب افراد کی نشاندہی سے زیادہ اُن کی طرف سے توجہ ہٹانا معلوم ہوتا تھا۔

خوف و ہراس
لاہور میں تھیٹروں اور دیگر تفریحی مقامات پر متعدد دھماکے کیے گئے جن میں جانی نقصان کا اندیشہ زیادہ نہیں تھا لیکن خوف و ہراس میں خاصا اضافہ ہوا۔ کرکٹ کے کھیل پر حملہ اِسی رجحان کا اگلا مرحلہ سمجھنا چاہیے۔ اب کئی برس تک کوئی بین الاقوامی کرکٹ ٹیم پاکستان نہیں آئے گی۔ سیاحت کا دروازہ ایک عرصے سے بند ہو چکا ہے۔ پاکستان کی عالمی تنہائی بڑھ رہی ہے اور داخلی استحکام مخدوش ہو رہا ہے
پاکستان کے ذرائع ابلاغ اور کچھ سیاسی حلقوں میں انتہا پسندی کے عذرخواہوں کی کوئی کمی نہیں۔ اِن حلقوں کا آزمودہ طریقہ کار انتہا پسندی کی کسی واردات کے بعد ایسی دھول اُڑانا ہے جس سے واردات کے مرتکب عناصر سے توجہ ہٹ جائے اور رائے عامہ کو انتہا پسندی کے مفروضہ اسباب اور سازشی نظریات میں اُلجھا دیا جائے۔

یہ اصحاب اِس امر کی نشاندہی کرنے میں تو بہت دلچسپی رکھتے ہیں کہ انتہا پسندی کی پشت پناہی کون کر رہا ہے لیکن یہ بیان کرنے سے ہچکچاہتے ہیں کہ ایسی کارروائیاں در حقیقت کون کر رہا ہے؟ یہ طریقہ کار انتہاپسندوں کے لیے نہایت مفید مطلب ہے۔

ابتدائی غبار بیٹھنے کے کچھ عرصہ بعد انتہا پسند تنظیمیں واقعے کی ذمہ داری قبول کر لیتی ہیں۔ ڈنمارک کے سفارت خانے یا میریٹ ہوٹل پر حملوں کے فوراً بعد تواتر سے بیرونی ہاتھ کا ذکررہا ۔ کچھ عرصہ بعد القاعدہ نے تسلیم کر لیا کہ دونوں مقامات پر اس کے فرستادہ اراکین نے حملے کیے تھے۔

دہشت گردی کی کسی بھی واردات کے بعد رائے عامہ میں انتہاپسندوں کے خلاف شدید نفرت پیدا ہونا لازمی امر ہے۔ جھوٹ یا تاویل آرائی کی مدد سے اس ممکنہ نفرت کو دبانا کسی بھی انتہا پسند کی حکمت عملی کا حصہ ہے۔

ایک نکتہ یہ بھی اُٹھایا گیا کہ القاعدہ یا اِس کی ذیلی تنظیمیں سری لنکا کو نشانہ کیوں بنائیں گی؟ اِس استدلال میں بنیاد پرست انتہا پسندی کی نوعیت کو سرے سے نظر اندازکر دیا گیا۔ القاعدہ یا اُس کی حلیف تنظیموں کو فلسطین، کشمیر یا افغانستان سے کوئی خصوصی تعلق نہیں ۔

1998ءمیں القاعدہ نے مغربی دنیا کے خلاف جہاد کا فتویٰ جاری کیا تو اُس میں فلسطین یا کشمیر کا ذکر تک نہیں تھا۔ بنیاد پرستوں کا اصل مقصد اپنی ہدف سرزمینوں اور بالآخر پوری دنیا پر اپنا تصور مذہب اور اُس سے پھوٹنے والا تصور سیاست مسلط کرنا ہے۔ اس راہ میں بُدھا کے مجسمے تباہ کیے جا سکتے ہیں اور اہلِ تشیع مسلمانوں پر حملے بھی ہو سکتے ہیں۔

القاعدہ منشور
1998ءمیں القاعدہ نے مغربی دنیا کے خلاف جہاد کا فتویٰ جاری کیا تو اُس میں فلسطین یا کشمیر کا ذکر تک نہیں تھا۔ بنیاد پرستوں کا اصل مقصد اپنی ہدف سرزمینوں اور بالآخر پوری دنیا پر اپنا تصور مذہب اور اُس سے پھوٹنے والا تصور سیاست مسلط کرنا ہے۔ اس راہ میں بُدھا کے مجسمے تباہ کیے جا سکتے ہیں اور اہلِ تشیع مسلمانوں پر حملے بھی ہو سکتے ہیں
انتہا پسند کسی قوم یاگروہ کا اس لیے مخالف نہیں کہ مذکورہ قوم یا گروہ نے اُسے کوئی نقصان پہنچایا ہے۔ ان کے تصور عالم میں ہر وہ فرد، گروہ اور قوم اُس کی دشمن اور جائز ہدف ہے جو اُس سے مختلف ہے یا اُس کے دستِ وحشت خیز پر بیعت کے لیے تیار نہیں۔

لاہور میں حملے کے بعد ایک سوال یہ اُٹھا کہ انتہا پسند کرکٹ کے کھلاڑیوں کو کیوں نشانہ بنائیں گے؟ اِس دلیل میں یہ مفروضہ کار فرما ہے کہ یہ لوگ کرکٹ جیسے معصوم شغل سے کیوں کِد رکھیں گے۔ اِس میں یہ حقیقت فراموش کی جا رہی ہے کہ انتہا پسندی بنیادی انسانی معصومیت ہی کی دشمن ہے۔ ہدف جس قدر معصوم ہو دہشت گردی اُسی قدر موثر قرار پاتی ہے۔ دہشت گردی کا مقصد خوف زدہ کرنا ہے۔ ایک بالغ انسان کی مصیبت کے مقابلے میں کسی معصوم بچے کی اذیت زیادہ دہشت ناک ہوتی ہے۔

یوں بھی اب سے پچیس برس پہلے ڈاکٹر اسرار احمد نے کرکٹ کو فُحش کھیل قرار دیا تھا۔ واضح رہے کہ اُن دنوں تحریک انصاف کے رہنما عمران خان قومی کرکٹ ٹیم کے کپتان تھے۔ طالبان کے افغانستان میں گیند سے کھیلنے والے بچوں پر تشدد کیا جاتا تھا۔ بات کرکٹ کی معصومیت یا کھلاڑیوں کی غیر سیاسی شناخت کی نہیں، انتہا پسند اپنے مقاصد کے حصول کے لیے کوئی بھی راستہ اختیار کر سکتے ہیں۔

انتہا پسند پاکستان کے شمال مغربی سرحدی صوبے میں اپنے پنجے موثر طور پر گاڑ چکے ہیں۔ اگلا منطقی ہدف پنجاب ہے۔ اقتصادی اور سیاسی طور پر پسماندہ سرائیکی خطے میں فرقہ واریت کا ہتھیار موثر ثابت ہو سکتا ہے۔ چنانچہ ڈیرہ غازی خان، میانوالی اور بھکر جیسے علاقوں میں فرقہ وارانہ کشیدگی کا گراف بلند کیا جا رہا ہے۔

مرکزی پنجاب کو دھڑکا
مرکزی پنجاب میں شہری متوسط طبقہ کو یہ دھڑکا ہے کہ ان کی اقتصادی خوشحالی پنجاب کے دیگر حصوں کو کھٹکتی ہے۔ چنانچہ مرکزی پنجاب میں انتہا پسندوں نے ہراول دستے کے طور پر ایسی کارروائیاں شروع کی ہیں جنھیں بظاہر انتہاپسندی کے بڑے دھارے سے منسوب کرنا مشکل نظر آتا ہے
مرکزی پنجاب میں شہری متوسط طبقہ کو یہ دھڑکا ہے کہ ان کی اقتصادی خوشحالی پنجاب کے دیگر حصوں کو کھٹکتی ہے۔ چنانچہ مرکزی پنجاب میں انتہا پسندوں نے ہراول دستے کے طور پر ایسی کارروائیاں شروع کی ہیں جنھیں بظاہر انتہاپسندی کے بڑے دھارے سے منسوب کرنا مشکل نظر آتا ہے۔

لاہور میں تھیٹروں اور دیگر تفریحی مقامات پر متعدد دھماکے کیے گئے جن میں جانی نقصان کا اندیشہ زیادہ نہیں تھا لیکن خوف و ہراس میں خاصا اضافہ ہوا۔ کرکٹ کے کھیل پر حملہ اِسی رجحان کا اگلا مرحلہ سمجھنا چاہیے۔ اب کئی برس تک کوئی بین الاقوامی کرکٹ ٹیم پاکستان نہیں آئے گی۔ سیاحت کا دروازہ ایک عرصے سے بند ہو چکا ہے۔ پاکستان کی عالمی تنہائی بڑھ رہی ہے اور داخلی استحکام مخدوش ہو رہا ہے۔

پاکستان کو انتہاپسندی سے شدید خطرہ لاحق ہے۔ مشکل یہ ہے کہ پاکستان میں سیاسی قیادت، ریاستی ادارے اور رائے عامہ اس خطرے کا مقابلہ کرنے میں پوری طرح یکسو نہیں ہیں۔


Also read:

Shaheryar Ali: Lahore Attacks: Mumbai Deja Vu

2 comments:

Anonymous said...

This journalist as well as this blog should get a "Sitara-e-Ansar-Barni".

پرویز قادر said...

پاکستان وچ اردو، پشتو، سرائیکی تے سندھی زباناں کوں سرکاری دفتری تعلیمی تے قومی زباناں بݨاوَݨ ٻہوں ضروری ھے۔
پاکستان دے ہر سرکاری تے نجی ٹی وی چینل تے سرائیکی، سندھی، پشتو ، پنجابی،بلوچی تے اردو کوں ہر روز چار چار گھنٹے ݙتے ونڄن۔
پہلی توں بی اے تائیں سکولاں کالجاں تے مدرسیاں وچ سرائیکی یا سندھی یا پشتو لازمی مضمون دے طور تے شروع کرو

Post a Comment

1. You are very welcome to comment, more so if you do not agree with the opinion expressed through this post.

2. If you wish to hide your identity, post with a pseudonym but don't select the 'anonymous' option.

3. Copying the text of your comment may save you the trouble of re-writing if there is an error in posting.